constantinople – قسطنطنیہ کی جنگ میں 23فوجیں ناکام کیوں ہوءیں

constantinople  1453  میں  رومی  شہنشاہ  قسطنطین  یازدہم  اور عثمانی سلطان  محمد  الثانی  کے  درمیان  ایک  تاریخی  جنگ  لڑی  گئی

0 496

constantinople – قسطنطنیہ کی جنگ میں 23فوجیں ناکام کیوں ہوئیں

constantinople  1453  میں  رومی  شہنشاہ  قسطنطین  یازدہم  اور عثمانی سلطان  محمد  الثانی  کے  درمیان  ایک  تاریخی  جنگ  لڑی  گئی ۔ جس  میں  ایک  حکمران  فاتح  بن  کر  ابھرا ۔ جس  نے  اگلے 300 برس  کے  لیے  تاریخ  کا  دھارا  بدل  کے  رکھ  دیا ۔
اس  سے  پہلے  23 فوجیں  اس  افسانوی  فصیل  بند  شہر  پر  قبضہ  کرنے  کی  کوشش کر  چکی  تھیں ۔ لیکن  وہ  سب  ناکام  ہوئیں

constantinople

فتح  قسطنطنیہ  مسلمانوں  کی  تاریخ  کا ایک  ایسا روشن  پہلو ہے  جو آج  تک پوشیدہ  رہا ۔ استنبول  کی  تاریخ ﴿history of istanbul میں  قسطنطنیہ  کو فتح  کرنے  والے  حکمران  کا نام  سلطان محمد فاتح  ہے  جس  نے  قسطنطنیہ ﴿constantinople﴾  کی  ناقابل  یقین  فتح حاصل  کی۔ 

قسطنطنیہ  کا  نیا  نام ﴿qustuntunia new name استنبول  رکھا  گیا ۔ جو  کی  ترکی میں واقع ہے۔ جبکہ  سلطان  محمد  فاتح  نے  اس  شہر  کا  نام  بدل  کر  اسلام  بول  رکھا  تھا۔ اور  اسی  شہر  کو  عثمانیہ  سلطنت  کا  پاءیہ  تخت  مقرر  کیا۔ 

قسطنطنیہ ﴿استنبول﴾ کی اہمیت کے بارے میں کچھ شخصیات کیا کہتی ہیں آءیے اس کا جاءزہ لیں۔
constantinople

Jason Goodwin
(Auther; Lords of the horizons) 

قسطنطنیہ  ایک  ایسا  شہر  ہے  جس  کی  

قسمت  میں  دنیا  کا  مرکز  ہونا  لکھا  گیا۔  یہ  مرکز  کی  مانند  ہے۔  ایشیا ، یورپ ، بحیرئہ اسود ، بحیرئہ روم ، بلقان ، اٹلی  کی  شہری  ریاستیں ۔  اس  کے  آس  پاس  واقع  ہیں۔  ایسا  لگتا  ہے  جیسے  کوئی  تتلی  ہو ، اور  قسطنطنیہ  اس  تتلی  کا  جسم  ہو ۔

constantinople
Dr. Karen Barkey
(Haas Distinguished Chair UC Berkeley)

قسطنطنیہ  ایک  تصور  ہے ۔  یہ  کسی  اسٹرٹیجک  مقام  سے  کہیں  بڑھ  کر  ہے ۔  یہ  سلطنت  کی  پرتوں  کا  عکس  ہے ۔  یہ  ان  تہذیبوں  کی  پرتوں  کا  عکس  ہے۔  جو  اس  میں  رچی  بسی  ہوئی  ہیں۔

Dr. Emrah Safa Gurkan
(Associative Professor of History, ISTANBUL 29, MAYIS University)

بحیرءہ  روم  میں  قسطنطنیہ  ہمیشہ  ہی  سب  سے  بڑا  شہر  رہا  ہے۔  اسے  ہمیشہ  عرض  موعود  قرار  دیا  گیا ۔  جس کے  قبضے  میں  قسطنطنیہ  ہو  گا۔  وہ  دنیا  کا  حکمران  ہو  گا۔

مزید پڑھیں ؛ارتغرل غازی پاکستان میں ۔ انجین الٹان ترک اداکار پاکستان پہنچ گئے

constantinople

اگر  ہم  قسطنطنیہ  کی  تاریخ ﴿1451﴾ میں  واپس  جائیں۔   تو  قسطنطنیہ  (qustuntunia) کا  حکمران  شہنشاہ  یازدہم  تھا۔  رومیوں  کے 1100 سالہ  دور  کے لیے  سب  سے  بڑا  خطرہ  عثمانی  تھے ۔ اناطولیہ  کے  سابق  جنگی  حکمرانوں  اور خانہ  بدوشوں  نے اس  نئی  سلطنت  کی  بنیاد  رکھی  تھی ۔ یہ  سلطنت،  سلطنت عثمانیہ ﴿ottoman empire  کہلاتی  تھی ۔ جو  مشرقی  یورپ  تک  پھیل  چکی  تھی۔  1451ء میں  عثمانیہ  سلطنت  کے  حکمران  سلطان مراد  ثانی  کی  موت  کچھ  ایسے  واقعات  کا  تسلسل  بنی ۔ جو بہت  جلد  عثمانیوں  اور  رومیوں  کو  جنگ  کے  دہانے  پر  لے  گئی۔

 

constantinople

constantinopleقسطنطنیہ  کی  حفاظت  وہ  عظیم  دیواریں  کرتی تھیں ۔ جو  شہنشاہ تھیودو سیوس دوم  نے پانچویں  صدی  میں  تعمیر  کروائی  تھیں ۔ یہ اب  تک  کی  مضبوط  ترین  تعمیر  ہیں ۔  قسطنطنیہ  کی  دیواریں  اس  حالت  میں  1100  سال  تک  قائم  رہیں ۔ یہ  عسکری  انجینئری  کا  غیر  معمولی  نمونہ  ہیں ۔ 
دیواروں  کی  پانچ  پرتیں  تھیں ۔ جن  کے  باہر  ایک  خندق  تھی ۔ پھر ایک  کھلا  میدان جہاں  فوجی  دستے  بھاگتے  تھے ۔ یہ ایک  قسم  کا  میدان  قتل  تھا ۔ پھر بیرونی  دیوار جہاں  پر مینار  بنے  ہوئے تھے ۔ اس  کے  بعد  ایک  اور  میدان  قتل  تھا  اور  پھر  اندرونی  دیوار  تھی ۔ یہ پورا  نظام  تقریباً  200  فٹ  گہرا  تھا ۔ اگر  خندق  کی  گہرائی  سے  دیواروں  کی  بلندی  تک  دیکھا  جاتا  تو  یہ  تقریباً  100 فٹ  بلند  تھا ۔

constantinople

اگر  ہم  قسطنطنیہ (qustuntunia)  کے  جغرافیے  کو  دیکھیں  تو اسے  تقریباً  تمام سمتوں  سے  پانی  نے  گھیر  رکھا  تھا ۔ قسطنطنیہ  کو  قرون  وسطیٰ  کا  سب  سے  بہترین  دفاعی  شہر  قرار  دیا  جاتا  تھا۔ لیکن  اس  کے  دفاع  میں  ایک  شگاف  موجود تھا ۔ خلیج  کے  ساتھ  سمندری  رخ  پر  موجود  دفاعی  دیواریں  ناقص  اور  کمزور  تھیں۔ یعنی  شہر  کے  شمال  مشرقی  حصے  کی  گزرگاہ ۔

 

constantinople

constantinopleخلیج  میں  داخلے  کو  روکنے  کے  لیے  ایک  ضخیم ، نصف میل ، سخت فولادی  زنجیر تھی۔  اس  زنجیر  نے  سات  صدیوں  تک  بندرگاہ  کی  حفاظت  کی  تھی ۔ یہ عظیم  الشان زنجیر ایکروپولس  سے  جنیوا  کی  بستی  میں ، برج  غلطہ  تک  پھیلی  ہوئی  تھی ۔ یہ 30 ٹن  وزنی  تھی ۔  لہذا  جب  خلیج  میں  رومیوں  کے  دوستانہ  جہاز  آتے  تو  وہ  زنجیر  نیچے  ک ر دیتے ۔ تاکہ  جہاز  آسانی  سے  گزر  سکے ۔  لیکن  اگر  کوئی  دشمن جہاز  آتا  تو  وہ  زنجیر  کھینچ  لیا  کرتے  تھے ۔  یہ  زنجیر  ان  جہازوں  کے  داخلے  میں  رکاوٹ  بن  جاتی ۔  پھر اس  کے  پیچھے  موجود  رومی  بحری  فوج  جہازوں  پر حملہ  کر  دیتی ۔ 

constantinople

اتنے  سخت  ترین  دفاع  ہی  کی  وجہ  سے  23  فوجیں  اس  شہر  پر  قبضہ  نہ  کر  سکیں ۔  لیکن  سلطان  محمد  فاتح  نے  1453 میں  قسطنطنیہ  جو  کہ آ ج  کا  استنبول  ہے  کو  فتح  کر دکھایا ۔ اور  آپ ۖ  کی  خواہش  کو  بھی  پورا  کر  کے  خود  کو  ایک  عظیم  فاتح  ثابت  کیا ۔

 

آیا صوفیہ کے بعد مسجد اقصٰی اگلی منزل ہے۔ آج کا ارتغرل رجب طیب اردوان ہے

 

Qustuntunia (Istanbul) Ki Fatha

 

 

Leave A Reply

Your email address will not be published.